فرانس کی جانب سے باکو کی ’توہین‘ پر آذربائیجان کا بڑا قدم

2 months ago 12

باکو: آذربائیجان نے آرمینیا مذاکرات منسوخ کر دیے، اور مذاکرات میں فرانس کی شمولیت کو مسترد کر دیا۔

الجزیرہ کے مطابق فرانس کی جانب سے باکو کی ’توہین‘ پر آذربائیجان نے بڑا قدم اٹھا لیا، آذربائیجان کے رہنما نے کہا کہ باکو کی ’توہین‘ کرنے کے بعد فرانس آرمینیا کے ساتھ امن مذاکرات میں حصہ نہیں لے سکتا۔

آذربائیجان کے صدر الہام علیئیف نے کہا کہ ان کا ملک نہیں چاہتا کہ آرمینیا کے ساتھ امن مذاکرات میں فرانس حصہ لے۔

صدر آذربائیجان نے فرانس کے صدر ایمانوئل میکرون اور یورپی کونسل کے سربراہ چارلس مشیل کے ساتھ 7 دسمبر کو برسلز میں ہونے والی چو طرفہ ملاقات منسوخ کر دی۔

علیئیف نے جمعہ کے روز کہا کہ میکرون نے دارالحکومت باکو پر ’حملہ‘ کیا اور ’توہین‘ کی ہے، اس لیے اب ہم ایک دوسرے کے ساتھ نہیں بیٹھ سکتے۔

انھوں نے آرمینیائی وزیر اعظم نکول پشنیان پر الزام لگایا کہ وہ مذاکرات کے لیے فرانس کے بروکر بننے پر اصرار کر رہے ہیں اور اس طرح مذاکرات کو ناکام بنانا چاہتے ہیں۔

باکو میں بین الاقوامی نمائندوں کے ساتھ ایک کانفرنس میں گفتگو کرتے ہوئے علیئیف نے کہا کہ میکرون نے آذربائیجان پر حملہ کیا، اور ہم پر وہ کرنے کا الزام لگایا جو ہم نے نہیں کیا۔ انھوں نے کہا فرانسیسی رہنما نے ’آذربائیجان مخالف مؤقف‘ اپنایا، اور باکو کی ’توہین‘ کی، یہ واضح ہے کہ ان حالات میں، اس رویے کے ساتھ، فرانس آذربائیجان اور آرمینیا کے درمیان امن عمل کا حصہ نہیں بن سکتا۔

Comments

Read Entire Article