خون جما دینے والی سردی پاکستانی پولیو ورکرز کا جذبہ کم نہ کرسکی

1 week ago 8

میر پور: پولیو جیسے مرض سے نجات کا قومی مقصد رکھنے والی خواتین پولیو ورکرز نے عزم و ہمت اور حوصلے کی نئی مثال قائم کردی۔

 قومی مقصد کے لئےجذبہ سچا ہو تو کٹھن اور دشوار گزار راستے کوئی اہمیت نہیں رکھتے، اس بات کو آزاد کشمیر سے تعلق رکھنے والی دو پولیو ورکرز نے سچ ثابت کر کے دکھا دیا۔

پاکستان میں انسداد پولیو کے حوالے سے کوشاں محکمہ صحت کے ذیلی ادارے پاک پولیو نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ایسی دو خواتین پولیو ورکرز کی ویڈیو شیئر کی جو دشوار گزار پہاڑیوں پر چار فٹ برف ہونے کے باوجود بھی اپنا کام خوش اسلوبی سے نجام دے رہی ہیں۔

پاک پولیو کی جانب سے پولیو ورکرز کو موسم کی خرابی اور دشوار گزار راستوں کے باوجود گھر گھر ویکسین پلانے پر سلام پیش کیا گیا۔ ویڈیو کے ساتھ لکھا گیا کہ خواتین ورکرز کا عزم اس بات کی عکاسی ہے کہ پاکستان جلد ہی پولیو سے نجات حاصل کرلے گا۔

Our frontline polio heroes are unstoppable❕

As extreme cold weather ❄️ blankets Azad Jammu & Kashmir, these brave women make their way through several feet of snow to deliver vaccines to children 👧🏻👦🏻 during the ongoing #endpolio campaign.#SalamPolioWorker pic.twitter.com/srwFotTM3S

— Pak Fights Polio (@PakFightsPolio) January 14, 2021

پاک پولیو نے والدین سے اپیل کی کہ جب فرنٹ لائن پر کام کرنے والے ہیروز آپ کے دروازوں پر پہنچے تو آپ اپنے بچوں کو انسداد پولیو مہم کے دوران ویکسین کے قطرے ضرور پلوائیں۔

ٹویٹر پر ویڈیو شیئر ہونے کے بعد صارفین نے خواتین کی ہمت و حوصلے اور عزم کو داد دیتے ہوئے لکھا کہ ’موسم کی سختی، شدید برفباری اور خون جما دینے والی سردی بھی پولیو ورکرز کا حوصلہ کم نہ کرسکی، پولیو کے خاتمے کے لیے ورکرز اپنا فریضہ ادا کررہی ہیں‘۔ جس علاقے میں یہ خواتین ورکرز کام کررہی ہیں وہاں درجہ حرارت نقطہ انجماد سے نیچے ہے، شدید سردی کی وجہ سے شہری گھروں میں محصور ہیں۔

پاکستان میں تعینات جرمن سفیر، معروف گلوکار و اداکار فرحان سعید سمیت دیگر اہم شخصیات نے خواتین کے جذبے اور ہمت کو سراہا۔

پاک پولیو کی جانب سے خیبرپختونخواہ کے ضلع بٹگرام کی تصاویر بھی شیئر کی گئیں جن میں پولیو ورکز شدید سردی اور برف پوش وادی میں کام کرتے نظر آرہے ہیں۔

Polio worker trudges through knee-deep snow ❄️ to reach target houses in Battagram during the ongoing national immunisation campaign.

These heroes brave extreme weather only to make sure every child 👶 gets to live a healthy and #poliofree life.#SalamPolioWorker pic.twitter.com/6mjQaq3edZ

— Pak Fights Polio (@PakFightsPolio) January 14, 2021

واضح رہے کہ یہ پہلی بار نہیں بلکہ گزشتہ برس ایبٹ آباد میں بھی برفباری کے دوران پولیو ورکرز نے ایک لاکھ سے زائد بچوں کو گھر گھر جا کر ویکسین پلائی تھی۔

#SalamPolioWorkers for braving extreme weather conditions & tough terrains to deliver vaccines across #Pakistan! This level of collective dedication can soon help #EndPolio in 🇵🇰. Please ensure your children receive the vaccine when these frontline heroes knock on your door. https://t.co/qYTSjf3gAs

— Bernhard Schlagheck (@GermanyinPAK) January 14, 2021

اس سے قبل سخت سردی کے موسم میں سوات کے برف پوش پہاڑوں پر چلتے ہوئے پولیو ویکسین پلانے کے لیے جانے کی تصاویر اور ویڈیوز سوشل میڈیا پر سامنے آئی تھی ، جن میں وہ شدید سرد موسم اور برف باری کے دوران بھی پولیو پلانے کے لیے اپنے سفر پر رواں دواں تھے، دشوار گزار برفیلے راستے بھی ان کی ہمت نہ توڑ سکے تھے۔ بعد ازاں وزیراعظم عمران خان سمیت اقوام متحدہ کا ادارہ برائے صحت نے بھی پولیو ورکرز کی کاوشوں کا خوب سراہا تھا۔

All heroes dont wear capes, some wear yellow vests!https://t.co/tu4JUkraZm@PakFightsPolio#Polio #AJK #Pakistan

— Farhan Saeed (@farhan_saeed) January 14, 2021

Comments

Read Entire Article